Paani Par Mendhak – Jhilmil Breckenridge (Urdu)

جنگل میں
جنگلی لہسنوں سےگزرتا ہوا
چلتا تھا میں

مینڈک کی چھلانگ سے
پانی کے اوپر
کھلنے والی ہری اور سنہری
پرچھایاں دیکھتا تھا

زمین سے اپنی ناک لگا کر
کانوں سے جنگل کی گونجتی آوازیں
سنتا تھا میں

مسلتے پتوں کے رنگوں میں
شہری کانکریٹ کی چھاپ
جھلکتی ہے

جیسے خوفناک خوابوں کو اپنا کر
نیند میں دوبے بچوں کے دانت کٹکٹآتے ہیں
ویسے ہی خون اور اینٹوں کا چورا
آپس میں ٹکراتا ہے

دن کی روشنی میں
ایک دوسرے کو چیرتی ہوی
ہم فاصلہ لکیروں کے اندھیرے میں
بنا رنگوں کے خواب دن میں دیکھتا ہوں میں
وہ چلتے تھے
وہ سارے خوابوں میں آ رہا ہے
نازک بچوں کا ڈر
ایک نسل سے گزر کر
پانی کے اوپر کا
مینڈک کا گم ہو جانا

Paani Par Mendhak

jungle mein
junglee lehsoonon se guzarta hua
chalta tha mein

mendhak ki chalaang se
paani ke upar
khilne vaali hari aur sunehri
parchaiyan dekhta tha

zameen pe apni naak lagaakar
kaano se jungle ki goonjti aawaazein
sunta tha mein

masalte patton ki ragon mein
shehri concrete ki chaap
jhalakti hai

jaise khaufnaak khwaabon ko apnaakar
neend mein doobe bacchon ke daant kitkitaate hain
vaise hi khoon aur eeton ka choora
aapas mein takraata hai

din ki roshni mein
ek doosre ko cheerti hui
humfaasla lakeeron ke andhere mein
bina rangon ke khwaab din me dekhta hoon main

voh chalte they
voh saare khwabon mein aa raha hai
naazuk bacchon ka dar
ek nasal se guzarkar
paani ke upar ka
mendhak ka gum ho jaana

Translated from the Malayalam by Jhilmil Breckenridge